مفہوم کا دوسے مفہوم سے تعارض

پی۔ڈی۔ایف فارمیٹ میں مقالہ محفوظ کریں



مفہوم اور دوسرے مفہوم میں تعارض سے مراد ایک دلیل کے مفہوم کا دوسری دلیل کے مفہوم سے ٹکراؤ ہے۔


تعریف

[ترمیم]

مفہوم کا دوسرے مفہوم سے تعارض کا شمار ادلہ لفظی میں تعارض کی اقسام میں ہوتا ہے۔ اس کا مطلب یہ ہے کہ دو دلیلوں کے مفہوم کے درمیان تنافی و ٹکراؤ برپا ہو۔

مثال

[ترمیم]

مثلا: جملہ یجب الامساک الی اللیل کا مفہوم رات تک امساک کو واجب قرار دیتا ہے۔ اس کے مقابلے میں دوسرا جملہ ان جاءک زید فلا یجب الامساک فی اللیل؛ اگر تمہارے پاس زید آیا تو رات میں امساک واجب نہیں ہے۔ اس دوسرے جملے کا مفہوم یہ نکلتا ہے کہ اگر زید آیا تو امساک واجب نہیں ہے۔ پس پہلے جملے کا مفہوم مفہومِ شرط ہے جوکہ رات ہونے تک امساک کے وجوب پر دلالت کر رہا ہے اور دوسرے جملے کا مفہوم مفہومِ غایت ہے جو کہ رات میں امساک کے عدمِ وجوب پر دلالت کر رہا ہے۔ فرق نہیں پڑتا کہ زید آیا ہے یا زید نہیں آیا۔ ہر دو مفہوم میں تعارض پایا جاتا ہے۔

حکم

[ترمیم]

دو مفہوموں میں تعارض کی صورت میں دونوں کے درمیان ہم جمع دلالی کو انجام دیں گے۔ یعنی ایک کو دوسرے پر حمل کریں گے۔
[۳] الحلقۃ الثالثۃ فی اسلوبہا الثانی، ایروانی، باقر، ج۴، ص ۳۵۳ ـ ۳۵۱۔


حوالہ جات

[ترمیم]
 
۱. نہایۃ الافکار، عراقی، ضیاء الدین، ج۴، جزء ۲، ص۱۵۰۔    
۲. فوائد الاصول، نائینی، محمد حسین، ج ۴، ص ۷۳۳ ۷۳۲۔    
۳. الحلقۃ الثالثۃ فی اسلوبہا الثانی، ایروانی، باقر، ج۴، ص ۳۵۳ ـ ۳۵۱۔


مأخذ

[ترمیم]

فرہنگ‌نامہ اصول فقہ، تدوین توسط مرکز اطلاعات و مدارک اسلامی، ص۳۳۹، مقالہِ تعارض مفہوم و مفہوم۔    






جعبه ابزار