حدیثِ ضعیف

پی۔ڈی۔ایف فارمیٹ میں مقالہ محفوظ کریں



حديثِ ضعيف خبر واحد كى اقسام ميں سے ايك قسم ہے۔


حدیث ضعیف كى وضاحت

[ترمیم]

علم درایت ميں حديثِ ضعيف ايك اصطلاح ہے۔ اس حديث كو ضعيف كہا جاتا ہے جس حديث كے تمام يا بعض راويوں ميں وہ شرائط نہ پائى جاتى ہوں جو حدیثِ صحیح، حدیثِ حسن اور حدیثِ موثق ميں معتبر شمار كى جاتى ہيں، مثلا سندِ حدیث ميں كوئى ايسا راوی موجود ہو جو مجہول يا فاسد العقیدة ہو اور اس كى توثيق وارد نہ ہوئى ہو اگرچے حديث كى سند ميں موجود بقيہ راوى امامى اور عادل ہوں تو ايسى حديث ضعيف كہلائے گى۔
[۱] الدرایہ (شہید ثانی) ص۲۴۔

حديثِ ضعيف كو اگر بيرونى قرائن اور شواہد سے قطع نظر ملاحظہ كيا جائے تو وہ حجّت نہيں ہے، ليكن اگر مضمونِ حديث پر مشہور علماء كا عمل موجود ہے تو آيا يہ عملِ مشہور اس حديث كے ضعف كا جبران كرتا ہے يا نہيں؟ اس مسئلہ ميں علماء كا اختلاف ہے۔
[۲] الدرایہ (شہید ثانی) ص۲۷-۲۸۔
[۴] مصباح الفقاہۃ ج۱، ص۷۔

مشہور كى نظر يہ ہے كہ عملِ مشہور حديث كے ضعف كا جبران كرتا ہے۔
قولِ مشہور يہ ہے كہ سنن، مستحبات اور مکروہات ميں عملِ مشہور ضعيف احاديث كا جبران كرتا ہے جس كو قاعدہ تسامح در ادلّہ سنن سے تعبير كيا جاتا ہے۔

حوالہ جات

[ترمیم]
 
۱. الدرایہ (شہید ثانی) ص۲۴۔
۲. الدرایہ (شہید ثانی) ص۲۷-۲۸۔
۳. تنقیح (طہارت) ج۱، ص۴۷۷۔    
۴. مصباح الفقاہۃ ج۱، ص۷۔
۵. تنقیح (طہارت) ج۹، ص۳۸۰۔    
۶. قواعد فقہیہ (بجنوردی) ج۳، ص۳۳۳۔    
۷. مأة قاعدة فقہیہ ص۹۵۔    


ماخذ

[ترمیم]

فرہنگ فقہ مطابق مذہب اہل بیت علیہم السلام، ج۳، ص۲۶۵-۲۶۶۔    






جعبه ابزار